شہادتیں ہمارے لئے نئی بات نہیں،اصغر خان اچکزئی

عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر اصغرخان اچکزئی نے کہاہے کہ شہادتیں ہمارے لئے نئی بات نہیں ،یہ دھرتی ہماری ماں ہے کوئی ہمیں ملک کا شہری سمجھیں یا نہ سمجھیں ہم اپنی دھرتی ماں کی حفاظت کی خا طر قر با نیاں دیتے رہیں گے ،سابقہ صوبائی اور وفاقی حکومتوں کی جانب سے سانحہ8اگست 2016ءکے جوڈیشل کمیشن کی رپورٹ کو چیلنج کرنا قابل افسوس عمل تھا،منہ پر ہاتھ رکھنے یا آواز دبانے سے مسائل حل ہونے کی بجائے مزید گھمبیر ہونگے ۔ان خیالات کااظہار انہوں نے گزشتہ روز بلوچستان ہائی کورٹ میں آل پاکستان لائرز کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ عوامی نیشنل پا رٹی کے صو با ئی صدر اور عسکر خان اچکزئی شہیدایڈووکیٹ کے بڑے بھا ئی اصغرخان اچکزئی نے سانحہ8اگست کے شہداءکو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہاکہ شہداءقوم کے محسن ہیں ان کی یاد میں بلوچستان کے وکلاءتنظیموں کی جانب سے پروقار تقریب کے انعقاد پر شکر گزار ہیں ،انہوں نے کہاکہانہوں نے کہاکہ غریب محکوم اور مطلوم اقوام کیلئے سانحہ8اگست پہلاسانحہ نہیں،نا ہی شہادتیں ہمارے لئے نئی بات ہے بلکہ سانحہ بابڑہ سے آج تک ہم پیاروں کے جنازے اٹھاتے چلے آئے ہیں لیکن مظلوم کیلئے صدائے حق سے ہمیں کوئی دستبردار نہیں کرسکتا، انہوں نے کہاکہ عوامی نیشنل پارٹی کشمیریوں کو اس استصواب رائے کی حمایت کرتی ہے لیکن کشمیر کے مسئلے پر پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں اپوزیشن اور دیگر رہنماﺅں کی جانب سے افغانستان کا ذکر کرنا اور وہاں مداخلت کو جاری رکھنے کی باتیں افسوسناک ہیں مجھے سمجھ نہیں آتا افغانوں کے ساتھ ہاتھ ملاتے ہوئے اتنی ہچکچاہٹ کیوں محسوس کی جاتی ہے، انہوں نے کہاکہ پاکستان اور اسلام کو کوئی خطرہ نہیں ،نواب نوروز خان ،نواب اکبر خان بگٹی کے پیچھے کون پڑاتھا میں پوچھتاہوں کہ جسٹس قاضی فائز عیسی کے خلاف کون ہیں؟ وزیرستان میں آگ اور خون کی ہولی کھیلنے والوں کو کس نے لابسایا ،انہوں نے کہاکہ سانحہ8اگست کے شہداءکا قصور مظلوموں کی آواز بننا تھا ،2007ءکے وکلاءتحریک کے ثمرات سے ہم اس طرح مستفید نہیں ہوسکے جس طرح ہمیں ہوناچاہےے ،اگر جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے معاملے پر وکلاءکو ناکامی ہوئی تو پھر وکلاءکی کوئی بات نہیں سنی جائے گی ،انہوں نے کہاکہ یہ دھرتی ہماری ماں ہے اور اس کیلئے ہم کسی قربانی سے دریغ نہیں کرینگے کوئی ہمیں اس ملک کا شہری سمجھیں یا نہ سمجھیں، انہوں نے کہاکہ قومیں اندر سے منظم ہوتو کوئی انہیں نقصان نہیں پہنچا سکتا،جب انصاف اور وسائل کی تقسیم کا فقدان ہوگا تو پھر حالات سدھرنے کی بجائے خراب ہونگے ۔انہوں نے کہاکہ ایک طرف جنگ کی سی صورتحال میں بھی واہگہ بارڈر پر تجارت جاری ہیں لیکن دوسری جانب سے معمولی واقعات کی آڑ میں چمن اور طورخم بارڈر بند کردئےے جاتے ہیں ،اصغر خان اچکزئی نے سابقہ وفاقی وصوبائی حکومتوں کی جانب سے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے سانحہ8اگست سے متعلق کمیشن رپورٹ کو چیلنج کرنے کو باعث شرم قراردیا اور کہاکہ ہمارا آج بھی مطالبہ ہے کہ اس رپورٹ پر عملدرآمد کیاجائے ،انہوں نے کہاکہ کسی کے منہ پر ہاتھ رکھنے یا آواز دبانے سے مسائل حل نہیں ہونگے بلکہ ان میں اضافہ ہوگا۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Close
Close