خضدار گوادر ٹو رتوڈیرو قومی شاہراہ ناقص میٹریل کے استعمال سے چندماہ بعد تباہ

خضدار گوادر ٹو رتوڈیرو قومی شاہراہ بین الاقوامی شاہراہ سی پیک کے کھوڑی تا جھل مگسی سیکشن بننے کے چند ماہ بعد پوری طرح سے تباہ ہوگئی ہے اس سڑک پر سفر کرنے میں مسافروں و ٹر انسپورٹوں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے قومی خزانے کے اربوں روپیہ پانی کے ریلوں کے نظر ہوئے محسوس ہوتا ہے کہ اس سڑک کو 50 سال قبل بنایا گیا تھا قومی خزانہ و عوام ٹیکسوں کے اربوں روپیہ بد ترین کرپشن کے شکار کیوں نظر ہوئے اس قدر کی خطیر رقم سے کتنا فیصد اس سٹرک پر صرف ہوئی اور کتنا رقم طاقت ور لوگوں و اداروں کے لوگوں کے جیبوں میں چلا گیا اس کی تحقیق کون کریگا اس سوال کا جواب این ایچ اے کے آفیسران و تحقیقاتی اداروں کے پاس کیوں نہیں ن کمپنیوں کی نا قص کار کردگی پر کیوں کر خاموشی اختیار کی گئی سابقہ وزیر اعظم نے اس نا قص و نامکمل شاہراہ کا کیوں افتاح کیا اس شاہراہ کو سی پیک کے حصہ قرار دینے والے اس سڑک کے تعمیر کی معیار سے کیوں صرف نظر کررہے ہیں اس طرح کے بے راہ روئی و کھلی کرپشن سے صرف نظر کرنے کے بعد یہ بات واضح ہوجاتی ہے کہ حکومت کے اداروں کی جانب سے کرپشن کو روکنے کے دعوے محض بیانہ کے تحت محدود ہیں یہ سب ادارے محض سیاسی انتقام کے طور پر کام کرتے ہیں اس وجہ سے ان اداروں پر عوام کو کھلی اعتماد نہیں ہوتی ہے جو ایک قومی المیہ ہی ہے ۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Close
Close