بلوچ شخصیت کے بارے میں کوئی بھی منفی کمنٹ دینے سے قبل اپنے شجرہ نسب کو سامنے رکھیں

0

- Advertisement -

بلوچستان نیشنل پارٹی ضلع کوئٹہ کے صدر و رکن بلوچستان اسمبلی میر احمد نواز بلوچ نے کہا ہے کہ اپنے شجرہ نسب سے نا بلد شیخ رشید جیسے غیر سنجیدہ اور مسخرے فرد کو فخر بلوچستان سردار اختر جان مینگل کے بارے میں زبان درازی سے قبل سو دفعہ سوچنا چاہیے تھا اخلاقی اقدار سے عاری اور بلوچ روایات سے لاعلم کپڑوں کی طرح سیاسی پارٹیاں بدلنے والے ابن الوقت مسخرے کے بیان سے نہ صرف اہلیان بلوچستان بلکہ پوری دنیا میں بسنے والے بلوچ قبائل کی دل آزاری ہوئی ہے شیخ رشید نے ایسا بیان دیکر اپنے خاندانی پس منظر اور تربیت کو واضع کیا بلوچستان نیشنل پارٹی ضلع کوئٹہ کے سیکرٹریٹ سے جاری بیان میں میر احمد نواز بلوچ نے کہا کہ ڈکٹیٹر شپ کے گملوں میں جنم لینے والی کانٹے دار جھاڑیوں سے خیر کی توقع نہیں کرنی چاہیے شیخ رشید جیسے ضمیر اور نظریات کے سودا گر منفی زبان درازی کے ذریعے ہی اپنی دکانداری چلاتے ہیں ایسے ٹھگنے اور بکاو مال کی مارکیٹ لال حویلی اور اس کے مکینوں کے پاس تو ہوسکتی ہے مگر اہل ضمیر و باشعور افراد کے آگے ان کی اوقات محض بندر کا ڈانس دکھانے والے ایک مداری سے زیادہ نہیں شیخ رشید کی اس ہرزہ سرائی سے ان کی بلوچستان دشمنی کا برملا اظہار ہوتا ہے سردار اختر جان مینگل اور ان کا خاندان بلوچ قبائل میں  غیر معمولی قبائلی اہمیت کے ساتھ ساتھ ایک مضبوط  سیاسی پس منظر اور نظریات و اصولوں پر مبنی تاریخ رکھتا ہے جنہوں نے ہمیشہ اقتدار کے بجائے اصولی موقف و اخلاقی اقدار کو فروغ دیا ہے جن کی عملی جدوجہد تاریخ کا ایک روشن باب ہے شیخ رشید کا بیان قابل مذمت ہے اور ڈکٹیٹر شپ کی پیداوار شخص پر واضح کرتے ہیں کہ وہ کنوے کے مینڈک جتنی اوقات میں رہتے ہوئے کسی بھی بلوچ شخصیت کے بارے میں کوئی بھی منفی کمنٹ دینے سے قبل اپنے شجرہ نسب کو سامنے رکھیں کوئی بھی بلوچ صدیوں سے رائج روایتی قبائلی اقدار کی پامالی برداشت نہیں کر سکتا اور نہ کرے گافوری طور پر معافی طلب  شیخ رشید کو اپنے کئے پر نادم ہوتے ہوئے  کرنی چاہیے 

Leave A Reply

Your email address will not be published.