بلوچستان سے نکلنے والی گیس سے دوسرے صوبوں کے کارخانے چلائے جارہے ہیں لیکن یہاں کی عوام گوبر جلانے پر مجبور ہیں،سید گل شاہ بخاری

بلوچستان سے نکلنے والی گیس سے دوسرے صوبوں کے کارخانے چلائے جارہے ہیں لیکن یہاں کی عوام لکڑیاں اور گوبر جلانے پر مجبور ہیں ان خیالات کا اظہار بی این پی (عوامی) نصیر آباد کے جنرل سیکریٹری سید گل شاہ بخاری نے میڈیا کے نمائندوں سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہی سید گل شاہ بخاری نے بتایا کہ ڈیرہ مراد جمالی کی پوری مشرقی آبادی میں گیس چیز کا کوئی نام نہیں شہر کی مغربی آبادی میں بھی گیس پریشر نہ ہونے کے برابر ہے لیکن سوئی سدرن کی جانب سے بلز کی فراہمی میں کوئی رکاوٹ نہیں انہوں نے کہا کہ شہر بھر میں گھریلوں اور تجارتی لگائے گئے نئے گیس میٹر بغیر گیس کے بھی یونٹ دے رہے ہیں اور کہا کہ رواں ماہ دسمبر میں تو بلکل گیس کی فراہمی بند کردی گئی ہے جوکہ ڈیرہ مراد جمالی کی عوام کے ساتھ زیادتی اور نہ انصافی کے مترادف ہے انہوں نے کہا کہ بلوچستان کے باسی گیس سمیت دیگر بنیادی سہولہات سے محروم ہیں بلوچستان سے نکلنے والی گیس پر پہلہ حق صوبے کی عوام کا ہے لیکن ایسا کچھ عمل نہیں انہوں نے مزید بتایا کہ سوئی سدرن گیس کمپنی برانچ ڈیرہ مراد جمالی نے دانستہ طور پر شہر کی نصف آبادی کو گیس فراہمی کو روکا ہوا ہے جبکہ آدھی آبادی کو بھی گیس پریشر میں انتہا کی کمی کرکے شہریوں کی زندگی کو اجیرن بنادیا گیا ہے سید گل شاہ بخاری نے سوئی سدرن گیس کمپنی کے جنرل منیجر سمیت دیگر حکام سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ ڈیرہ مراد جمالی کی یونین کونسل مغربی میں مکمل گیس کی بندش اور مشرقی آبادی میں پریشر کی کمی کا فوری نوٹس لیتے ہوئے فراہمی کو یقینی بنایا جائے۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Close
Close