پورے پاکستان میں1.5کروڑ خاندانوں کو صحت کی مفت سہولت میسر ہو گی حکومت پاکستان

حکومت پاکستان
وزارت نیشنل ہیلتھ سروسز، ریگولیشن اینڈ کوارڈینیشن

صحت سہولت پروگرام کے تحت پورے پاکستان میں1.5کروڑ خاندانوں کو صحت کی مفت سہولت میسر ہو گی۔ وفاقی وزیر صحت
وفاقی وزیر صحت عامر محمود کیانی نے کہا ہے کہ ہم آج اس ملک کے غیور عوام کے لیے صحت کا پیغام لائے ہیں اور وفاقی دارلحکومت سے صحت کے اس انقلابی پروگرام کا آغاز کر رہے ہیں ہمارا عزم ہے کہ صحت کی مساوی سہولیات کی فراہمی کے بغیر کوئی بھی قوم ترقی نہیں کر سکتی۔ لہذا وزیر اعظم کے Vision کے تحت صحت عامہ کے شعبے میں اہم اقدامات کئے جا رہے ہیں۔ یہ بات انہوں نے آج اسلام آباد میں صحت سہولت پروگرام کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ انہوں نے کہا کہ یہ پروگرام جو آج اسلام آباد میں شروع کیا جا رہا ہے پوری دنیا میں اپنی نوعیت کا واحد پروگرام ہے۔ اِس پروگرام کے تحت پورے پاکستان میں1.5کروڑ خاندان صحت کی سہولت استعمال کریں گے۔ اسلام آباد میں85,000 غریب خاندانوں کو یہ سہولت میسر ہو گی جبکہ فاٹا کے ہر خاندان کو صحت انصاف کارڈ دیں گے۔ یہ پروگرام عام بیماریوں کے داخلی علاج بشمول بچوں کی بیماریاں ، زچگی ، سرجیکل اور دیگر بیماریوں کو کور (Cover)کرے گا جن کی لاگت 120,000 روپے فی خاندان سالانہ ہو گی۔جبکہ اس پروگرام کے تحت داخلی امراض کے علاج جن میں بائی پاس،انجیو پلاسٹی، جل جانے والے افراد، حادثات، کینسر اور ذیابیطس کے مریض کیلئے 600,000 روپے فی خاندان سالانہ خرچ کئے جائیں گے۔ عامر محمود کیانی نے کہا کہ ہم اس پروگرام کی بھر پور انداز میں مانیٹرنگ کر رہے ہیں۔ میں اور میری ٹیم اس بات کو یقینی بنا رہے ہیں کہ ہر وہ سہولت جس کا اس پروگرام کے تحت وعدہ کیا گیا ہے وہ اس پروگرام کےbeneficiaries کو میسر ہو۔ اس پروگرام سے استفادہ حاصل کرنے والوں کی رائے معلوم کرنے کے لیے ایک نظام بھی متعارف کرایا گیا ہے تاکہ ہمیں یہ پتا چل سکے کہ وہ علاج معالجے کی سہولیات سے مطمئن ہیں یا نہیں۔ انہوں نے کہا اس پروگرام کے تحت گھر سے ہسپتال اور ہسپتال سے گھر تک ٹرانسپورٹیشن کے اخراجات بھی شامل ہیں۔ سرکاری اور پرائیویٹ ہسپتالوں کو پہلے سے طے شدہ معیار کے مطابق پینل پر لیا گیا ہے۔ ایک ٹول فری نمبر 0800-09009 کا بھی اہتمام کیا گیا ہے جس سے اس پروگرام کے متعلق ہر وقت جامع معلومات حاصل کی جا سکتی ہیں۔ وزیر صحت نے کہا کہ اس پروگرام کے تمام مراحل کے دوران میرٹ اور شفافیت کو ہر صورت ممکن بنایا گیا ہے۔ اس پروگرام پر عملدرآمد کو یقینی بنایا جائے گا اور انشااللہ اس پروگرام کے ثمرات سے عوام مستفید ہوں گے۔
ساجد حسین شاہ

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Close
Close